آزادی اظہار کو درپیش خطرات اور آئندہ انتخابات کے حوالہ سے پاکستان میں بین الاقوامی کانفرنس منعقد کرنی چاہئے: شرکاء

2

اسلام آباد ، جون 12 (اے پی پی ): آزادی اظہار کو درپیش خطرات اور آئندہ انتخابات کے حوالہ سے بین الاقوامی کانفرنس پاکستان میں منعقد کرنی چاہئے،تمام سیاسی جماعتوں کو اسے اپنے منشور کا حصہ بنانا چاہئے، صحافی ایک دوسرے کا ہاتھ تھام کر پاکستان کی جمہوری آزادی کے سفر کو جاریرکھیں، فاٹا کے انضمام کے باوجود 2018ءمیں قبائلی لوگوں کو انتخابات میں شامل کرنا چاہئے، صحافیوں کو یکجا ہونے کی ضرورت ہے۔ ان خیالات کااظہار جمعیت علماءاسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن، سابق سینیٹر فرحت اﷲ بابر، پی ٹی آئی کے رہنما سینیٹر شبلی فراز اور مسلم لیگ (ن) کےرہنما اور سابق وزیر اطلاعات پرویز رشید نے آر آئی یو جے کے زیر اہتمام آزادی اظہار رائے کو درپیش خطرات اور آئندہ انتخابات کے موضوع پر نیشنلپریس کلب اسلام آباد میں سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر پی ایف یو جے صدر افضل بٹ، آر آئی یو جے کے صدر مبارک زیب، حامدمیر، مطیع اﷲ جان اور صحافیوں کی کثیر تعداد موجود تھی۔ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے جمعیت علماءاسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نےکہا کہ سیاست، صحافت اور جمہوریت کا چولی دامن کا ساتھ ہے، جہاں دنیا میں جمہوریت ہے وہاں صحافت ہے، جہاں جمہوریت نہیں وہاں صحافت نہیںہے، بادشاہتوں میں ان کی پالیسی کے خلاف کوئی لفظ بھی نہیں بول سکتا جبکہ جمہوریت کی وجہ سے صحافت نے فروغ پایا ہے لیکن اسی جمہوریت نےسیاست کو نشانہ بنایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اعتدال پسندی اپنانے کی ضرورت ہے، ہم نے ہمیشہ صحافیوں کا ساتھ دیا ہے اور آئندہ بھی ان کا ساتھدیتے رہیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ایسا کوئی کام نہ کیا جائے جس سے ریاست کا نقصان ہو، ریاست ہماری ماں ہے، اس کا ایک تقدس ہے، ریاست محترمہے لیکن اس کے شہریوں کا بھی احترام ہونا چاہئے۔ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ فاٹا کے انضمام پر اختلاف تھا تاہم اس کے باوجود اسے کے پی کےمیں ضم کیا اور اس کا آئین بھی پاس کیا۔ کے پی کے کے انضمام کے باوجود فاٹا کے 23 حلقوں پر الیکشن 2018ءمیں نہیں ہوں گے بلکہ 2019ءمیں ہوںگے، فاٹا کے لوگوں کو 2018ءکے الیکشن میں کیوں آنے نہیںدے رہے ہیں، قبائلی لوگوں کو 2018ءکے انتخابات میں شامل کرنا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ ہمآج بھی وانا نہیں جا سکتے ہیں، شمالی وزیرستان میں بھی جے یو آئی کے کارکنوں کی ٹارگٹ کلنگ ہو رہی ہے۔ سینیٹر فرحت اﷲ بابر نے کہا کہ آر آئی یوجے نے آزادی اظہار کے موضوع پر قومی سطح پر سیمینار کا انعقاد کیا اور آر آئی یو جے نے صوبائی سطح پر بھی اس طرح کے سیمینار منعقد کرانےکا فیصلہ کیا ہے جس پر انہیں مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ فرحت اللہ بابر نے کہا کہ توہین عدالت اور سائبر کرائم ایکٹ میں ترامیم ہونی چاہئے، آرٹیکل 184 تینسے متعلق پارلیمان کو قانون سازی کرنی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ آر آئی یو جے کو قومی، صوبائی سیمینار سمیت ریجنل اور عالمی کانفرنس پاکستان میںہونی چاہئے۔ شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے سینیٹر پرویز رشید نے کہا کہ جمہور نے وطن ضرور حاصل کیا لیکن رہنے والوں کو آزادی میسر نہیں،پاکستان کو جمہوری ریاست بنانے کی جدوجہد کرنا ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں ایک دوسرے کا ہاتھ تھام کر پاکستان کی جمہوری آزادی کا سفر جاریرکھنا چاہئے۔ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے رہنما شبلی فراز نے کہا کہ آزادی اظہار کو درپیش خطرات اور آئندہ انتخابات کے حوالہ سےصحافیوں کو یکجا ہونا چاہئے۔ سیمینار سے پی ایف یو جے کے صدر افضل بٹ، سینئر صحافی حامد میر اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔

اے پی پی/ برلاس