پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی ذیلی کمیٹی کا اجلاس

48

اسلام آباد ،18جنوری (اے پی پی):پبلک اکاؤنٹس کمیٹی   کی  ذیلی کمیٹی  کا اجلاس سینیٹر شبلی فراز کی زیر صدارت    پارلیمینٹ ہا ؤس میں منعقد ہوا ۔ اجلاس میں بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں کے نقصانات پر وزارت توانائی کی جانب سے کمیٹی کو بریفنگ دی گئی ۔سیکرٹری توانائی نے کمیٹئ کو آگاہ کیا  کہ جولائی سے نومبر تک نقصانات 17 فیصد کررہےجبکہ گزشتہ سال اس عرصہ میں لاسز 17 اعشاریہ 3 فیصد تھے۔سیکریٹری توانائی نے کمیٹی کو مزید بتایا کہ بجلی چوروں کے خلاف کارروائی اور محکمہ میں سختی کے باعث لاسز کم ہوئےہیں ۔پنجاب میں سافٹ ویئر کے ذریعہ میٹر ریورس کر کے  سائینسی طریقہ سے چوری کی جاتی ہے اور پنجاب میں حالیہ کاروائیوں میں  ٹیکنالوجی کے ذریعہ بجلی چوری کرنے والے کئی گینگ پکڑے ہیں۔

سیکریٹری  نے  اجلاس کو آگاہ کیا کہ لوڈشیڈنگ کی اصل وجہ ریکوری کا نہ ہونا ہے زیادہ لاسز والے فیڈرز میں لوڈشیڈنگ آدھی کرنے کا فیصلہ سیاسی تھا، سیاسی فیصلہ کی وجہ سے سرکلر ڈیبٹ بڑھ گیا۔

 بجلی پیدا کرنے کی استدعاد کار کے حوالے سے بتاتے ہوئے سیکریٹری نے کہا کہ اس وقت ہمارے پاس 28 سے 29 ہزار میگا واٹ بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت ہے۔گرمیوں میں بجلی کی طلب 25 ہزار میگا واٹ تک پہنچ جاتی ہے، اپریل تک ہم 24 ہزار میگاواٹ بجلی صارفین کو فراہم کرنے کے قابل ہوجائیں گے۔اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے  سیکریٹری کا مزید کہنا تھا کہ  سیپکو کے لاسز 38 اعشاریہ 9 فیصد, سیپکو کے لاسز 34 اعشاریہ 8 فیصد رہے۔

اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کنونئیر کمیٹئ  شبلی فراز نے کہا ہم نے کرپشن کا خاتمہ کرنا ہے  اوراداروں کو اپنے پاوں پرکھڑا کرنا ہے۔

اے پی پی /صائمہ/شاہ زیب

وی این ایس  اسلام آباد