قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی کیجانب سے اسٹٹ لائف انشورنس کمپنی کے ملازمنس کے مسائل پر 4رکنی کمیٹی تشکیل

14

اسلام آباد، 14 مارچ ( اے پی پی): قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے تجارت و ٹیکسٹائل کے جمعرات کو ہونے والے  اجلاس میں کمیٹی چیئرمین سید نوید قمر نے اسٹیٹ لائف انشورنس کمپنی کے ملازمین کے مسائل پر رانا تنویر حسین کی سربراہی میں 4رکنی ذیلی کمیٹی بنادی۔

کمیٹی کے اجلاس میں  سیکرٹری وزارت تجارت یونس ڈاگا نے کمیٹی کو بتایا کہ اسٹیٹ لائف انشورنس کمپنی کے 800ارب روپے کے اثاثہ جات ہیں، 35لاکھ پالیسی ہولڈرز ہیں، یہاں شاہانہ طریقے سے خرچے چلائے گئے پالیسی ہولڈرز کو بونس بھی زیادہ دیا گیا اور کمیشن بھی زیادہ دیا گیا۔

سیکرٹری تجارت نے بتایا  کہ  سیکیورٹی ایکسچینج کمیشن نے وزارت کو کہا کہ اگر اسی طرح اخراجات جاری رہے تو نقصان ہوگا اور ادارہ حکومت کے ہاتھوں سے نکل جائے گا، ڈمی ایجنٹ کا رواج بھی ہے، 4 ٹیئرز میں سیلز مین ایجنٹ رکھے ہوئے تھے اور اس میں سینیئر لوگ بھی شامل تھے، فی ایجنٹ پالیسی لانے میں بھی کمی آئی پہلے سال میں 6 پالیسیاں آتی تھیں اب یہ 3پہ آگئیں ہیں،

انہوں نے مزید کہا کہ اس سے 4ارب 80کروڑ روپے کی بچت ہوگی، کمیٹی رکن نواب شیر نے کہا کہ اتنے لوگوں کو نکالا گیا ہے، ملازمین سڑکوں پر ہیں اس مسئلے پر ذیلی کمیٹی بنائی جائے۔

سورس: وی این ایس  اسلام آباد