آزاد کشمیر کے لیے اے ڈی بی منصوبوں کی مد میں پینتیس ارب روپے دینا چاہتے ہیں: سیکرٹری امور کشمیر

0
37

اسلام آباد، 13فروری  (اے پی پی):  قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے کشمیر و گلگت بلتستان کے اجلاس  میں سیکرٹری امور کشمیر طارق محمود پاشا نے کہا کہ  منسٹری  آزاد کشمیر کیلئے اے ڈی بی منصوبوں کیلئے  پینتیس ارب روپے دینا چاہتی ہے جو کہ  رواں سال کے بجٹ کے مقابلے  میں چالیس فیصد زیادہ ہو گا- جبکہ رواں مالی سال کیلئے پچیس ارب روپے مختص تھے۔

جمعرات کو چیئرمین کمیٹی  رانا شمیم احمد خان  کی صدارت میں   ہونے والے اجلاس  میں متفقہ قراردادیں منظور کی  گئیں، مزمتی قرارداد سید عمران احمد شاہ نے پیش کی جس میں  بھارتی اشتعال انگیزی اور  ایل او سی پر بلا اشتعال فائرینگ کا سلسلہ بڑھنے کی مذمت کی گئی۔

اجلاس میں  پیش کی  جانے والی قرارداد  میں   کہا گیا  کہ سلامتی کونسل اقوام متحدہ کے مبصر مشن کی واپسی کے لئے بھارت پر زور دے- کشمیر میں کرفیو اور لاک ڈاؤن کو 192 دن ہو گے  ہیں،80 لاکھ افراد قیدیوں کی طرح زندگی گزار رہے ہیں-قرار داد میں کہا گیا کہ سلامتی کونسل اور انسانی حقوق کی تنظیمیں بھارتی مظالم کا نو ٹس لیں-

سیکرٹری امور کشمیر طارق محمود پاشا نےکمیٹی میں اظہار خیال کرتے ہوۓ کہا کہ  رواں سال یوم یکجہتی کشمیر سابقہ روایات سے ہٹ کر منایا گیا ، اس برس کشمیر امور کو اجاگر کرنے کیلئے متعدد تقریبات رکھی گئیں، اسی طرح سفارتخانوں میں بھی پروگرامز منعقد کئے گئے اور  یوم یکجہتی کے بعد بھی اس رفتار کو جاری رکھا  وزیراعظم نے اگلے روز کشمیر میں جلسہ عام سے بھی خطاب کیا-

قائمہ کمیٹی کے اجلاس میں گزشتہ سفارشات کا جائزہ  بھی لیا  گیا اور  وزارت امور کشمیر کا بجٹ برائے دوہزار بیس ، اکیس کا جائزہ لیا  گا-

سیکرٹری امور کشمیر  نے   کمیٹی  کو بتایا  کہ گلگت بلتستان پاور سیکٹر کو نیشنل گریڈ بجلی فراہم نہیں کرتا-  گلگت بلتستان کے وزیراعلی یا صوبائی حکومت کے پاس کوئی ہیلی کاپٹر نہیں ہے-

اے پی پی/عمار برلاس /فاروق