سیاسی جماعتیں کشمیر پر حکومت کے بیانیے کو مزید مستحکم بنانے کےلئے ہاتھوں میں ہاتھ ڈال کر ساتھ دیں، شہریار خان آفریدی

74

اسلام آباد،29جنوری  (اے پی پی):چیئرمین پارلیمانی کمیٹی برائے کشمیر شہریار خان آفریدی نےتمام سیاسی جماعتوں پر زور دیا کہ وہ تنازعہ کشمیر پر حکومت کے اقدامات کا ساتھ دینے کیلئے کشمیر کمیٹی کے ساتھ مل کر کام کریں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے بحیثیت مہمان خصوصی کشمیر انسٹیٹیوٹ آف انٹرنیشنل ریلیشنز کے زیر اہتمام منعقدہ سیمینار کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس تقریب کی صدارت صدر آزاد جموں و کشمیر سردار مسعود خان نے کی۔ چیئرمین کشمیر انسٹی ٹیوٹ آف انٹرنیشنل ریلیشنز الطاف وانی نے کہا کہ ہمیں تمام بین الاقوامی فورموں پر تنازعہ کشمیر کو اٹھانے کے لئے موجودہ اور آئندہ حکمت عملی پر زور دینے کی ضرورت ہے۔ دنیا کو کشمیریوں کی نسل کشی کے لئے ہندوستان کی ہندوتوا حکومت کو جوابدہ ٹھہرا نے کی ضرورت ہے۔آفریدی نے کہا کہ کشمیر کمیٹی ڈیجیٹل میدان میں کشمیریوں کی حمایت میں اٹھنے والی آوازوں کو خاموش کرنے والے بھارتی ایجنڈوں کا مقابلہ کرنے کےلئے کوشاں ہے اور یہ کہ تمام سیاسی جماعتوں کو مقبوضہ کشمیر میں مودی حکومت کے کشمیریوں کی نسل کشی کے ایجنڈے کو بے نقاب کرنے کے لئے ایک جامع حکمت عملی تیار کرنے کے لئے حصہ ڈالنا چاہئے۔انہوں نے کہا کہ ہمیں نوجوانوں  کےلئے کشمیر سے متعلق معلومات تک رسائی کیلئے تمام رکاوٹوں کو ہٹانا ہے۔شہریار آفریدی نے مزید کہا کہ کشمیر پر موئثر بیانیہ اختیار کرنے کےلئے اکیڈمیا کے کردار کو بڑھانا ہوگا۔شہریار آفریدی نے کہا کہ ہمیں بھارتی مقبوضہ جموں و کشمیر میں پیشہ ور قوتوں کے ذریعہ ہونے والے انسانی حقوق ، بچوں اور خواتین کے حقوق کی پامالیوں کو بے نقاب کرنے کی ضرورت ہے۔آفریدی نے کہا کہ چونکہ بھارت اپنی نسل کشی کے منصوبے کے تحت کشمیری ثقافت اور ورثے کو نقصان پہنچانے اور اسے ختم کرنے کی کوشش کر رہا ہے ، لہذا ہم کشمیر کی ثقافت اور ورثے کو تحفظ فراہم کرنے پر کام کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان مقبوضہ جموں و کشمیر میں ہونے والے بھارتی مظالم کو بے نقاب کرنے کے لئے جدید میڈیا ٹولز کو استعمال کرنے پر کام کر رہا ہے۔انہوں نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں ہندوتوا حکومت کی فاشسٹ پالیسیوں کے بارے میں بھی دنیا کو بتانے کی تاکید کی۔