وزیراعظم شہباز شریف کی سعودی  ولیعہد سے ملاقات،  کثیر الجہتی شراکت داری کو مزید تقویت دینے کے عزم کا اظہار

4

شرم الشیخ۔8نومبر  (اے پی پی):وزیراعظم شہباز شریف نے پاکستان اورسعودی عرب کے مابین بڑھتے ہوئے اعلیٰ سطحی روابط پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان سعودی عرب کے ساتھ کثیرالجہتی شراکت داری کو مزید تقویت  دینے کا عزم رکھتا ہے، سعودی ولیعہد کا دورہ پاکستان باہمی دلچسپی کے تمام شعبوں میں دو طرفہ تعاون کو مزید گہرا کرنے میں معاون ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے سعودی عرب کے ولیعہد اور وزیراعظم شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز السعود سے گفتگوکرتے ہوئے کیا، دونوں رہنمائوں کے مابین ملاقات شرم الشیخ میں’’ کوپ -27 سمٹ‘‘کے موقع پرہوئی  ۔ ملاقات میں دونوں  رہنماوں  نے مختلف شعبوں میں  جاری تعاون کو  مزید  بڑھانے کے لئے   دوطرفہ تعلقات کا جائزہ لیا اور باہمی دلچسپی کے علاقائی اور عالمی  امور پر  بھی تبادلہ خیال کیا ۔وزیراعظم نے  اس امر کا اعادہ کیا کہ پاکستان سعودی عرب کے ساتھ اپنے برادرانہ روابط کو بے حد اہمیت دیتا ہے جن کی جڑیں مشترکہ عقیدے ،ثقافت و  اقدار  اور  باہمی حمایت کی لازوال روایت  میں   گہری ہیں ۔وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان کے عوام خادم حرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز السعود  کا بے حد احترام  اور سعودی عرب کے عوام سے بہت پیار کرتے ہیں۔وزیراعظم نے مملکت میں کام کرنے والے 20 لاکھ پاکستانیوں کے لیے سعودی عرب کی مہمان نوازی اور تعاون کو بھی سراہا جو دونوں برادر ممالک کی ترقی، خوشحالی اور اقتصادی پیش رفت میں اپنا کردار ادا کر رہے ہیں۔ریاض میں اپنی حالیہ ملاقات  کا ذکر  کرتے ہوئے وزیراعظم  شہباز شریف اور ولیعہدشہزادہ محمد بن سلمان    نے بڑھتے ہوئے اعلیٰ سطح  کے روابط  پر اطمینان کا اظہار کیا۔ دونوں رہنماؤں نے دونوں ممالک کے درمیان کثیر الجہتی شراکت داری کو مزید تقویت دینے کے عزم کا اظہار کیا۔سعودی ولیعہد کے پاکستان کے آئندہ دورے کے منتظر وزیراعظم نے کہا کہ انہیں اعتماد ہے کہ یہ دورہ باہمی دلچسپی کے تمام شعبہ جات میں دوطرفہ تعاون کو مزید گہرا کرنے میں معاون ہو گا۔ انہوں نے بالخصوص دونوں برادر ممالک کے عوام کے باہمی مفاد میں پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان تجارت، سرمایہ کاری، ترقی اور عوام کے درمیان روابط کو بڑھانے کی اہمیت پر زور دیا۔پاکستان کے سیلاب سے متاثرہ لوگوں کے لیے سعودی عرب کی امداد کو سراہتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ پاکستان ماحولیاتی تبدیلی کے اثرات سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے ممالک میں سے ایک ہے۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ بالخصوص ترقی پذیر ممالک میں ماحولیاتی سبب  سے ہونے والے ضیاع اور نقصان کی مالی اعانت پر توجہ  دینے کے حوالے سے  “کوپ -27” کے ٹھوس نتائج برآمد ہوں گے۔وزیر اعظم نے ’’مڈل ایسٹ گرین انیشی ایٹو ‘‘ کے تحت مربوط ماحولیاتی اقدام کی فعالیت  پر ولیعہد کی کاوشوں کو بھی سراہا اور سعودی قیادت کو پاکستان کی جانب سے مکمل معاونت کا یقین دلایا۔