او آئی سی سیکرٹری جنرل حسین ابراہیم طہٰ سے کشمیر کمیٹی جدہ کے وفد کی ملاقات،کشمیر کاز کیلئے مسلسل حمایت پر شکریہ ادا کیا

7

جدہ،05دسمبر(اے پی پی):اسلامی تعاون تنظیم کے سیکرٹری جنرل حسین ابراہیم طہٰ سے کشمیر کمیٹی جدہ کے وفد نے  مسعود پوری کی قیادت میں پیر کو یہاں جنرل سیکرٹریٹ میں ملاقات کی ہے۔ وفد نے سیکرٹری جنرل کی کوششوں اور کشمیر کاز کے لیے او آئی سی کی مسلسل حمایت پر شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے جموں و کشمیر کے بارے میں خصوصی ایلچی یوسف الدوبائی کا تنازعہ کشمیر کو اجاگر کرنے کی کوششوں پر شکریہ ادا کیا۔

 کشمیر کمیٹی نے اس بات پر زور دیا کہ او آئی سی کو چاہیے کہ وہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں اور کشمیری عوام کی امنگوں کے مطابق جموں و کشمیر تنازعہ کا دیرپا حل تلاش کرنے کے لیے سفارتی اور قانونی کوششوں کی قیادت کرے، جو کہ بھارت میں جاری انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی شدت کے مطابق ہے۔

مقبوضہ جموں و کشمیر خاص طور پر 5 اگست 2019 کے بعد کے حالات کی کمیٹی کے وفد نے نشاندہی کی کہ جموں و کشمیر اور فلسطین دو ایسے ہی تنازعات ہیں جہاں قابضین عوام پر ظلم کرنے کے لیے ایک جیسی حکمت عملی استعمال کر رہے ہیں۔

وفد نے زور دیا کہ او آئی سی فلسطین اور جموں و کشمیر دونوں کے عوام کے ناقابل تنسیخ حق خودارادیت کے لیے ٹھوس کوششیں کرے۔ وفد نے خاص طور پر سکریٹری جنرل کی توجہ مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں اسرائیلی بستیوں اور 5 اگست 2019 سے ہندوستانی حکومت کے غیر قانونی اقدامات کے درمیان مماثلت کی طرف مبذول کرائی جو مقبوضہ کشمیر میں آبادیاتی تبدیلیوں کو مجبور کرنے کے لیے تیار ہیں۔

وفد نے متفقہ طور پر منظور کردہ ایک قرارداد سیکرٹری جنرل کے حوالے کی جس میں آئی پی ایچ آر سی کے فیکٹ فائنڈنگ مشن اور اے ایس جی ہیومینٹیرین افیئرز کے لازمی دوروں کی درخواست کی گئی اور ایک مشاورتی ادارے کے طور پر قانونی ماہرین کے ایک پینل کو مقرر کیا گیا جیسا کہ کونسل کے 48ویں اجلاس کی توثیق کردہ ایکشن پلان کے ذریعے کیا گیا تھا۔

 انہوں نے مقبوضہ کشمیر کے لوگوں کی انسانی ضروریات کو پورا کرنے میں مدد کے لیے ایک جامع منصوبہ وضع کرنے اور اس پر عمل درآمد کرنے اور صدر جمہوریہ ہند کو ایک خط لکھنے کی خواہش کی تاکہ او آئی سی کے حقائق تلاش کرنے والے مشن کو او آئی سی کی متعلقہ قراردادوں کے مطابق مقبوضہ کشمیر کے دورے کی اجازت دی جائے۔

 کشمیر کمیٹی جدہ مکہ مکرمہ میں مقیم ممتاز کشمیری تارکین وطن رہنماؤں پر مشتمل ہے۔ جو جموں و کشمیر سے تعلق رکھنے والے اور جموں و کشمیر کے عوام کے حقیقی نمائندے ہیں جو کشمیر کاز کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں اور جدہ میں تیس سال سے زائد عرصے سے اقوام متحدہ کے وعدہ کردہ حق خودارادیت کے حصول کی وکالت کر رہے ہیں۔

اقوام متحدہ کی متعلقہ قراردادوں کے مطابق آزادانہ اور غیرجانبدارانہ استصواب رائے کے ذریعے تنازعہ جموں و کشمیر کے پرامن حل کے لیے او آئی سی کی اصولی اور غیر متزلزل حمایت کشمیر کاز کے لیے ناگزیر ہے۔