پاکستان اور سری لنکا کے مابین دو طرفہ تجارت کے حجم کو بڑھانے کیلئے آزادانہ تجارتی معاہدے کو وسعت دینے کی ضرورت ہے؛وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی

190

کولمبو ، 24 فروری (اے پی پی ): وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی  نے  کہا  ہے  کہ پاکستان اور سری لنکا کے مابین دو طرفہ تجارت کے حجم کو بڑھانے کیلئے آزادانہ تجارتی معاہدے(FTA) کو وسعت دینے کی ضرورت ہے۔ خطے میں معاشی روابط کے فروغ کیلئے بیلٹ اینڈ روڈ اقدام کے تحت “پاک چین اقتصادی راہداری منصوبہ، مرکزی اہمیت کا حامل ہے ۔ گوادر پورٹ اور سری لنکن پورٹس کے مابین روابط کا فروغ، وسط ایشیائی کاروباری مراکز تک آسان رسائی حاصل کرنے میں مدد گار ثابت ہو سکتا ہے۔

ان  خیالات کا  اظہار وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی  نے   سری لنکا کے ہم منصب ڈائنش گناوردنا سے بدھ کو یہاں  ملاقات   کے دوران کیا۔  دوران ملاقات دو طرفہ تعلقات ،مختلف شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون کے فروغ اور باہمی دلچسپی کے اہم علاقائی و عالمی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

اپنے ہم منصب سے گفتگو کرتے  ہوئے  وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم عمران خان کا حالیہ دورہ سری لنکا  پاکستان، سری لنکا کے ساتھ دو طرفہ تعلقات کو مزید وسعت دینے کا متمنی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیرِ اعظم عمران خان اور سری لنکن وزیر اعظم ماہندا  راجاپکاسا کی مشترکہ صدارت میں “تجارت و سرمایہ کاری کانفرنس” کا انعقاد، خوش آئند اقدام ہے جو دونوں ممالک کے درمیان دو طرفہ تجارتی تعلقات کو آگے بڑھانے میں کلیدی کردار ادا کرے گا۔

وزیر خارجہ نے علاقائی روابط کے فروغ کیلئے سارک فورم کو  مزید فعال بنانے اور دونوں ممالک کے مابین تہذیبی و ثقافتی تعلق کی اہمیت کو پیش نظر رکھتے ہوئے “مذہبی سیاحت” کو فروغ دینے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

دونوں وزرائے خارجہ نے اقوام متحدہ اور سارک سمیت اہم علاقائی و عالمی فورمز پر باہمی معاونت کے عزم کا اعادہ کیا، دونوں وزرائے خارجہ نے پاکستان اور سری لنکا کے مابین دو طرفہ تجارت، سرمایہ کاری، صحت ، تعلیم، زراعت، سائنس و ٹیکنالوجی سمیت باہمی دلچسپی کے شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون بڑھانے کیلئے مشترکہ کوششیں جاری رکھنے کا عندیہ دیتے ہوۓ دوطرفہ انسانی وسائل کی ترقی، علاقائی سلامتی ، دہشتگردی کے خلاف جنگ میں دو طرفہ تعاون کے فروغ پر اتفاق کیا۔

قبل ازیں سری لنکن وزارت خارجہ پہنچنے پر وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کا پر تپاک خیر مقدم کیا گیا۔ سیکرٹری خارجہ سہیل محمود اور وزارت خارجہ کے ترجمان زاہد حفیظ بھی ملاقات میں موجود تھے۔ بعدازاں وزیر خارجہ نے “وزٹرز بک” میں اپنے تاثرات بھی  قلمبند کئے۔