حکومت پرویز مشرف کو وطن واپس لانے کیلئے سہولت فراہم کرنا چاہتی ہے، انھیں واپس آ کر قانون کا سامنا کرنا چاہیئے، وزیرقانون اعظم نذیر تارڑ

5

اسلام آباد۔23جون  (اے پی پی):وفاقی وزیر برائے  قانون و انصاف اعظم نذیر تارڑ نے کہا ہے کہ حکومت سابق صدر پرویز مشرف کو وطن واپس لانے کیلئے سہولت فراہم کرنا چاہتی ہے،پرویز مشرف کو سزا ہوئی تھی وہ واپس آئیں اور عدالت انکے معاملے کو دیکھے،پرویز مشرف کو واپس آنا چاہیے اور قانون کا سامنا کریں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کو یہاں  ڈائریکٹوریٹ آف لیگل ایجوکیشن کے افتتاح کے موقع پر کیا ۔   وزیر قانون  نے کہا ہے کہ وزیر اعظم شہباز شریف کی خصوصی ہدایت ہے کہ بار کونسلز کیساتھ تعاون کیا جائے،ہمیشہ جمہوریت کیلئے بار کونسلز نے سب سے کلیدی کردار ادا کیا،آمریت کے  دور میں بار کونسلز نے کئی مشکلات کا سامنا کیا۔ انہوں نے کہا کہ رول آف لاء اور  گڈگورننس کیلئے وکلا کا کردار بہت اہم ہے،لیگل ایجوکیشن ڈائریکٹوریٹ قائم کرنے کیلئے سپریم کورٹ نے حکم دیا،ڈائریکٹوریٹ کا  سات رکنی اسٹاف بھی  تعینات کر دیا گیا ہے،لاءکالجز سے متعلق تمام معلومات ڈائریکٹوریٹ سے لی جاسکتی ہیں،رجسٹرڈ لا کالجز کی معلومات بھی  ڈائریکٹوریٹ کی ویب سائیٹ سے لی جاسکتی ہیں۔ وزیر قانون نے کہا کہ وزیر اعظم شہباز شریف نے صوابدیدی فنڈ سے گرانٹ ان ایڈ کو چار کروڑ روپے دیئے ہیں ،سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کو بھی چار کروڑ روپے کی گرانٹ دے دی ہے۔ اس موقع پر صدر سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن احسن بھون نے کہا کہ وکلا کے مسائل حل کرنے کیلئے احسن اقدام پر وفاقی وزیر قانون کا شکریہ ادا کرتے ہیں،سپریم کورٹ بار ہائوسنگ سوسائٹی کیلئے وزیر اعظم پاکستان نے خصوصی اقدامات کی ہدایت کی ہے،وزیر اعظم اور وزیر قانون سے مطالبہ کرتا ہوں کہ قاضی فائز عیسی کیس میں نظرثانی اپیل واپس لی جائے، نظرثانی اپیل واپس لیکر عدلیہ کو آزاد رہنے دیا جائے۔ احسن بھون نے کہا کہ پرویز مشرف کی سزا معطلی کیخلاف اپیل سپریم کورٹ سماعت کیلئے مقرر کرے،پرویز مشرف کیخلاف قانون کے مطابق کارروائی ہونی چاہیے ۔ اس دوران وائس چیئرمین پاکستان بار کونسل حفیظ الرحمان چوہدری  نے کہا کہ  جسٹس قاضی فائز عیسی کیخلاف نظرثانی اپیل واپس لی جائے ۔ جس پر وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ نے کہا کہ وزیراعظم شہباز شریف سے جسٹس قاضی فائز عیسی نظرثانی اپیل بارے بات کروں گا،کابینہ کے آئندہ اجلاس میں جسٹس قاضی فائز عیسی نظرثانی اپیل کا معاملہ اٹھاؤں گا، مستقل سیکرٹری قانون کا معاملہ بھی  کابینہ کے سامنے رکھوں گا ۔    قبل ازیں وزیر قانون نے سپریم کورٹ میں ڈائریکٹوریٹ آف لیگل ایجوکیشن کا افتتاح کیا ، افتتاحی تقریب سپریم کورٹ میں واقع پاکستان بار کونسل کے دفتر  میں منعقد ہوئی ۔ اس موقع پر وفاقی وزیر کو ڈائریکٹوریٹ  کے حوالے سے بریفنگ دی گئی۔ تقریب میں وائس چیئرمین پاکستان بار کونسل حفیظ الرحمان چوہدری،صدر سپریم کورٹ بار اور سینئر وکلا نے شرکت کی ۔